چہرے کے پردے کا حکم

عورتوں پر چہرے کا پردہ کرنا فرض ہے۔
اللہ سبحانہ وتعالى کا فرمان ہے:



وَقُلْ لِلْمُؤْمِنَاتِ يَغْضُضْنَ
مِنْ أَبْصَارِهِنَّ وَيَحْفَظْنَ فُرُوجَهُنَّ وَلَا يُبْدِينَ زِينَتَهُنَّ إِلَّا
مَا ظَهَرَ مِنْهَا



اور مؤمنہ عورتوں سے کہہ دیجیے کہ اپنی نگاہوں کو پست رکھیں اور
اپنی شرمگاہوں کی حفاظت کریں اور اپنی زینت کو ظاہر نہ کریں سوائے اس زینت کے جو
ظاہر ہو جائے۔



سورۃ النور:31



اس آیت مبارکہ میں
اللہ تعالى نے عورتوں کو اپنی زینت چھپانے کا حکم دیا ہے۔ اور کسی زینت کو خاص
نہیں کیا لہذا اس آیت کی رو سے عورت پہ فرض ہے کہ وہ اپنی ہر قسم کی زینت کو
چھپائے۔ اور چہرہ تو عورت کی زینت کا سب سے بڑا محل ہے, لہذا اسے چھپانا تو بہت ہی
زیادہ ضروری ہے۔



اس آیت میں ایسی زینت
کو مستثنى کیا گیا ہے جو خود ہی ظاہر ہو جائے۔ اس سے مراد عورت کی آواز ہے جب اسے
مجبورا کسی نا محرم مرد سے بات کرنا پڑتی ہے۔ یا اسکا قد کاٹھ ہے جسے وہ نہیں چھپا
سکتی۔



 

:
طباعة